Home / تقریبات / ادب / غالب اکیڈمی میں ماہانہ ادبی نشست کا اہتمام 

غالب اکیڈمی میں ماہانہ ادبی نشست کا اہتمام 

16 days ago
0

غالب اکیڈمی میں ماہانہ ادبی نشست کا اہتمام 
گزشتہ روز غالب اکیڈمی نئی دہلی میں ایک ادبی نشست کا اہتمام کیا گیا جس کی صدارت ڈاکٹر جی آر کنول نے فرمائی ۔انھوں نے اپنی تقریر میں کہا کہ ادبی نشستوں سے کچھ نہ کچھ حاصل ہوتا ہے۔آج کی نشست میں مضامین پڑھے گئے،افسانہ بھی پڑھا گیا،ڈرامہ بھی پڑھا گیا اور شاعری بھی سننے کو ملی،اس طرح کی نشستیں ہوتی رہنی چاہئے۔اس موقع پر ڈاکٹر عقیل احمد نے غالب کی آزادی کے عنوان سے اپنے پرچے میں کہا کہ غالب کے یہاں آزادی کا تصور بہت وسیع ہے۔ وہ ایسی آزادی چاہتے ہیں جس سے کسی کو تکلیف نہ پہنچے۔اسی لئے ایسی جگہ گھر بنانے کی بات کرتے ہیں جہاں کوئی اور نہ ایسا گھر ہو جس میں نہ در ہو نہ دروازہ ہو۔ڈاکٹر شہلا احمد نے غالب کی سوانح پر ایک مضمون پڑھا۔ترنم جہاں نے روٹی اور وہ کے عنوان سے ایک افسانہ سنایا۔چشمہ فاروقی نے پردیس ڈرامہ پڑھ کر سنایا۔اس موقع پر شعرا نے اپنے کلام سے سامعین کو محظوظ کیا منتخب اشعار پیش خدمت ہیں۔
اس پر تمھارا نام ہی لکھ دیتے ہیں چلو
سادہ ورق پڑا ہے جو دل کی کتاب کا 
بشیر چراغ کشمیری 
مجروح کر رہے ہیں کردار جو ہمارا
اب کیسے دیں صفائی لوگوں کے بیچ جا کے
احمد علی برقیؔ اعظمی 
شفق دیکھی تو قاتل میں یہ سمجھا
ترادامن نچوڑا ہے کسی نے
ظہیر برنی
ہم تو بقول میر ہیں یارو خوار جہاں کی نظروں میں
نا حق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی
متین امروہوی
آدمی نے بھر دیا ہے زہر جب ماحول میں 
غیر ممکن ہے چلے شام و سحر تازہ ہوا
جی آر کنول
آخر میں سکریٹری غالب اکیڈمی نے غالب کے یوم ولادت 27دسمبر اور اگلی نشست 13جنوری کو ہونے کا اعلان کیا۔
عقیل احمد


2017-12-18

About محمد ہارون عباس قمر

محمد ہارون عباس، صحافی، براڈکاسٹراورسافٹ وئر انجینئرپاکستان کے مانچسٹر فیصل آباد میں پیدا ہوئے۔ابتدائی تعلیم فیصل آباداوربراڈکاسٹنگ کی تعلیم ہلورسم اکیڈمی ، ہالینڈسے حاصل کی۔ کمپیوٹر میں تعلیم اسلام آباد، پاکستان سے حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ، ریڈیائی صحافت سے وابستہ رہے ہیں۔اس حوالے سے پاکستان کے مختلف ٹی وی چینلزکے ساتھ ساتھ ریڈیو ایران،ریڈیو پاکستان سے ان کی وابستگی رہی۔ تعلیم اور صحافتی سرگرمیوں کے سلسلے میں وہ پاکستان کے مختلف شہروں کے علاوہ ایران، سری لنکا، نیپال، وسطی ایشیائی ریاستوں‌کے علاوہ مشرقی یوروپ کے مختلف ممالک کا سفر کر چکے ہیں۔مختلف اخبارات میں سماجی، سیاسی اور تکنیکی امور پر ان کے مضامین شائع ہوتے رہتے ہیں۔علاوہ ازیں اردو زبان کو کمپیوٹزاڈ شکل میں ڈھالنے میں ان کا بہت بڑا کردار ہے۔ محمد ہارون عباس ممتاز این جی اوز سے وابستہ رہے ہیں۔ جن میں جنوبی ایشیائی ممالک کی تنظیم ساوتھ ایشین سنٹر اور پاکستان کی غیر سرکاری تنظیموں کے نمائندہ فورم پاکستان این جی اوز فیڈرشین شامل ہیں۔ علاوہ ازیں پاکستان مسلم لیگ کے مرکزی میڈیا ونگ اسلام آباداور پاکستان کے پارلیمنٹرینز کی تنظیم پارلیمنٹرین کمشن فار ہیومین رائٹس میں بھی تکنیکی امور کے نگران رہے ۔وہ پاکستان کے سب سے بڑے نیوز گروپ جنگ گروپ آف نیوزپیپرز، پاکستان کے اردو زبان کے فروغ کے لئے قائم کئے گئے ادارے مقتدرہ قومی زبان ، پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی گروپ دیوان گروپ آف کمپنیز کو تکنیکی خدمات فراہم کرتے رہے ہیں۔ محمد ہارون عباس القمر آن لائن کے انتظامی اور تکنیکی امور کے نگران ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں انٹرنیٹ پر پاکستان کی تمام نیوز سائٹس کے پلیٹ فارم پاکستان سائبر نیوز ایسوسی ایشن کے پہلے صدر ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے