Home / عالمی حالات / افغان تاجر نے ابوظہبی کے ولی عہد کی خطیر رقم کی پیشکش ٹھکرا دی

افغان تاجر نے ابوظہبی کے ولی عہد کی خطیر رقم کی پیشکش ٹھکرا دی

میں نے دوکاندار کو مہنگے داموں قالین فروخت کرنے کی پیشکش کی لیکن اس نے انکار کردیا، ولی عہد ابوظہبی شیخ محمد : فوٹو : فائل

ابوظہبی: افغان شہری نے عرب امارات کے بانی و سابق سربراہ کے بیٹے شیخ محمد کو شیخ زید النہان کی  تصاویر پر مشتمل قالین فروخت کرنے سے انکار کردیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق عرب امارات کے بانی و سربراہ شیخ زید النہان کے بیٹے ابوظہبی کے ولی عہد شیخ محمد کو ان کے ہی شہر میں واقع ایک افغان دکاندار نے قالین فروخت کرنے سے انکار کردیا۔

ولی عہد شیخ محمد نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر واقعے کی تصاویر شائع کرتے ہوئے بتایا ہے کہ میں نے ایک دکان کا دورہ کیا جہاں ایک قالین پر میرے والد کی تصویر بنی ہوئی تھی، میں نے افغان دوکاندار کو مہنگے داموں قالین فروخت کرنے کی پیشکش کی لیکن اس نے پرکشش پیشکش کے باوجود قالین فروخت کرنے سے انکار کردیا اور بے ساختہ کہا کہ یہ بابا زید ہیں، یہ الفاظ شیخ زید مرحوم سے بے پناہ محبت اور اس دوکاندار کے دل میں ان کے مقام کو ظاہر کررہے تھے،  یہ وہ محبت کی کہانی ہے جو شیخ زید کے لئے لوگوں کے دلوں میں موجود ہے۔

شیخ محمد نے کہا کہ متحدہ عرب امارات عالمی سطح پر محبت، رواداری اور باہمی بقا کے اس نمونے پر کاربند ہے جو میرے والد نے مقرر کیا تھا اور اس کے ذریعے انہوں نے دنیا بھر کے کروڑوں لوگوں کے دلوں میں گھر کیا، عرب امارات میں بھی دنیا بھر کے باشندوں کی ایک بڑی تعداد موجود ہے جو ہم سے محبت کرتے ہیں اور ہمارے ساتھ  رہتے ہوئے ہمارے خوابوں اور امیدوں میں شریک ہیں، ایسے تمام لوگوں سے ہم کہتے ہیں کہ امارات آپ کا دوسرا ملک ہے۔

About محمد ہارون عباس قمر

محمد ہارون عباس، صحافی، براڈکاسٹراورسافٹ وئر انجینئرپاکستان کے مانچسٹر فیصل آباد میں پیدا ہوئے۔ابتدائی تعلیم فیصل آباداوربراڈکاسٹنگ کی تعلیم ہلورسم اکیڈمی ، ہالینڈسے حاصل کی۔ کمپیوٹر میں تعلیم اسلام آباد، پاکستان سے حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ، ریڈیائی صحافت سے وابستہ رہے ہیں۔اس حوالے سے پاکستان کے مختلف ٹی وی چینلزکے ساتھ ساتھ ریڈیو ایران،ریڈیو پاکستان سے ان کی وابستگی رہی۔ تعلیم اور صحافتی سرگرمیوں کے سلسلے میں وہ پاکستان کے مختلف شہروں کے علاوہ ایران، سری لنکا، نیپال، وسطی ایشیائی ریاستوں‌کے علاوہ مشرقی یوروپ کے مختلف ممالک کا سفر کر چکے ہیں۔مختلف اخبارات میں سماجی، سیاسی اور تکنیکی امور پر ان کے مضامین شائع ہوتے رہتے ہیں۔علاوہ ازیں اردو زبان کو کمپیوٹزاڈ شکل میں ڈھالنے میں ان کا بہت بڑا کردار ہے۔ محمد ہارون عباس ممتاز این جی اوز سے وابستہ رہے ہیں۔ جن میں جنوبی ایشیائی ممالک کی تنظیم ساوتھ ایشین سنٹر اور پاکستان کی غیر سرکاری تنظیموں کے نمائندہ فورم پاکستان این جی اوز فیڈرشین شامل ہیں۔ علاوہ ازیں پاکستان مسلم لیگ کے مرکزی میڈیا ونگ اسلام آباداور پاکستان کے پارلیمنٹرینز کی تنظیم پارلیمنٹرین کمشن فار ہیومین رائٹس میں بھی تکنیکی امور کے نگران رہے ۔وہ پاکستان کے سب سے بڑے نیوز گروپ جنگ گروپ آف نیوزپیپرز، پاکستان کے اردو زبان کے فروغ کے لئے قائم کئے گئے ادارے مقتدرہ قومی زبان ، پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی گروپ دیوان گروپ آف کمپنیز کو تکنیکی خدمات فراہم کرتے رہے ہیں۔ محمد ہارون عباس القمر آن لائن کے انتظامی اور تکنیکی امور کے نگران ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں انٹرنیٹ پر پاکستان کی تمام نیوز سائٹس کے پلیٹ فارم پاکستان سائبر نیوز ایسوسی ایشن کے پہلے صدر ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے