Home / کاروبار / کاروباری برادری کو پٹرولیم قیمتوں میں اضافے پر تشویش

کاروباری برادری کو پٹرولیم قیمتوں میں اضافے پر تشویش

صنعتی کارکردگی متاثر ہو گی،طاہرجاوید، عوام پربوجھ ہوگا،حکومت فیصلہ واپس لے، عرفان یوسف۔ فوٹو: فائل

صنعتی کارکردگی متاثر ہو گی،طاہرجاوید، عوام پربوجھ ہوگا،حکومت فیصلہ واپس لے، عرفان یوسف۔ فوٹو: فائل

 اسلام آباد /  لاہور:  فیڈریشن آف پاکستان چیمبرآف کامرس اینڈ انڈسٹریز (ایف پی سی سی آئی) کے صدر غضنفر بلور نے کہا ہے کہ حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کر کے عام آدمی اور کاروباری طبقے کے لیے نئی مشکلات پیدا کر دی ہیں کیونکہ اس سے ملک میں مہنگائی کی نئی لہر آئے گی اور عوام کی قوت خرید کم ہونے سے کاروباری سرگرمیاں بہت متاثر ہوں گی تاہم حکومت کاروبار اور عوام کو مزید مشکلات سے بچانے کے لیے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافہ فوری واپس لے۔

صدر ایف پی سی سی آئی غضنفر بلور نے اسلام آباد چیمبر، راولپنڈی چیمبر، گوجرنوالہ چیمبر، گجرات چیمبر کے نمائندوں سے ملاقات کی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں میں اضافہ کرنے کے بجائے پٹرولیم مصنوعات پر عائد بھاری ٹیکسوں اور ڈیوٹیوں پر نظر ثانی کرے، بہتر یہ تھا کہ حکومت اس کا سارا بوجھ عوام اور کاروباری طبقے کو منتقل کرنے کے بجائے پٹرولیم مصنوعات پر عائد بھاری ٹیکسوں اور سرچارجز کو کم کرتی۔

غضنفر بلور نے کہا کہ حکومت کے اس فیصلے سے برآمدات بھی مزیدمہنگی ہوں گی جس سے عالمی مارکیٹ میں ہماری برآمدات مزید متاثر ہوں گی۔ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے سے کاروباری لاگت میں مزید اضافہ ہو گا کیونکہ پیداواری سرگرمیاں مہنگی ہوں گی اور خام و تجارتی مال کی ترسیل کے لیے ٹرانسپورٹیشن کی قیمت بھی مزید بڑھے گی۔ انہوں نے کہا کہ اس فیصلے سے صنعتی شعبے کی کارکردگی فوری متاثر ہو گی کیونکہ پٹرولیم مصنوعات بعض صنعتوں کے لیے اہم خام مال ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی معیشت کو پہلے ہی متعدد چیلنجز کا سامنا ہے کیونکہ ملک کا تجارتی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ بڑھ رہا ہے، ہماری برآمدات میں کمی واقع ہوئی ہے اور ملکی قرضوں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔

صدر ایف پی سی سی آئی نے کہا کہ ان حالات میں حکومت کو چاہیے تھا کہ وہ ملک میں کاروباری لاگت کو کم کرنے پر زیادہ توجہ دیتی لیکن پٹرولیم مصنوعات کی قیتموں میں مزید اضافہ حکومت کی ان تمام کوششوں کو متاثر کرے گا جو وہ کاروبار اور برآمدات کی بحالی کے لیے کر رہی ہے، ان تمام مشکلات سے بچنے کا بہتر حل یہی ہے کہ حکومت ایسے فیصلے کرنے سے گریز کرے۔

غضنفر بلور نے کہا کہ عوام اور کاروباری طبقے پر مزید بوجھ ڈالنے کے بجائے حکومت کو چاہیے کہ وہ تمام غیر ضروری اخراجات پر قابو پانے کی کوشش کرے اور صنعت و تجارت کومزید نقصان سے بچانے کے لیے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافہ فوری واپس لے۔

ایف پی سی سی آئی کے ریجنل چیئرمین عرفان یوسف نے کہا کہ ہمارے ملک کی آبادی کی بڑی تعداد خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہی ہے اور پٹرولیم مصنوعات و گیس کی قیمتوں میں حالیہ اضافے سے روزمرہ کی اشیا اور غذائی اجناس کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہو گااور عوام پر شدید بوجھ پڑے گا۔

عرفان یوسف نے حکومت سے مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ وہ کاروبار اور عوام کو مزید مشکلات سے بچانے کے لیے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافہ فوری واپس لے، حکومت پہلے ہی ہائی اسپیڈ ڈیزل پر 31فیصد جنرل سیلز ٹیکس وصول کر رہی ہے اور فی لیٹر پٹرول پر 10روپے بطور پٹرولیم ڈیولپمنٹ سر چارج لے رہی ہے۔ لاہور چیمبرکے صدر طاہر جاوید ملک نے کہا کہ قیمتوں میں اضافے کے فیصلے سے صنعتی شعبے کی کارکردگی فوری متاثر ہو گی۔

About محمد ہارون عباس قمر

محمد ہارون عباس، صحافی، براڈکاسٹراورسافٹ وئر انجینئرپاکستان کے مانچسٹر فیصل آباد میں پیدا ہوئے۔ابتدائی تعلیم فیصل آباداوربراڈکاسٹنگ کی تعلیم ہلورسم اکیڈمی ، ہالینڈسے حاصل کی۔ کمپیوٹر میں تعلیم اسلام آباد، پاکستان سے حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ، ریڈیائی صحافت سے وابستہ رہے ہیں۔اس حوالے سے پاکستان کے مختلف ٹی وی چینلزکے ساتھ ساتھ ریڈیو ایران،ریڈیو پاکستان سے ان کی وابستگی رہی۔ تعلیم اور صحافتی سرگرمیوں کے سلسلے میں وہ پاکستان کے مختلف شہروں کے علاوہ ایران، سری لنکا، نیپال، وسطی ایشیائی ریاستوں‌کے علاوہ مشرقی یوروپ کے مختلف ممالک کا سفر کر چکے ہیں۔مختلف اخبارات میں سماجی، سیاسی اور تکنیکی امور پر ان کے مضامین شائع ہوتے رہتے ہیں۔علاوہ ازیں اردو زبان کو کمپیوٹزاڈ شکل میں ڈھالنے میں ان کا بہت بڑا کردار ہے۔ محمد ہارون عباس ممتاز این جی اوز سے وابستہ رہے ہیں۔ جن میں جنوبی ایشیائی ممالک کی تنظیم ساوتھ ایشین سنٹر اور پاکستان کی غیر سرکاری تنظیموں کے نمائندہ فورم پاکستان این جی اوز فیڈرشین شامل ہیں۔ علاوہ ازیں پاکستان مسلم لیگ کے مرکزی میڈیا ونگ اسلام آباداور پاکستان کے پارلیمنٹرینز کی تنظیم پارلیمنٹرین کمشن فار ہیومین رائٹس میں بھی تکنیکی امور کے نگران رہے ۔وہ پاکستان کے سب سے بڑے نیوز گروپ جنگ گروپ آف نیوزپیپرز، پاکستان کے اردو زبان کے فروغ کے لئے قائم کئے گئے ادارے مقتدرہ قومی زبان ، پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی گروپ دیوان گروپ آف کمپنیز کو تکنیکی خدمات فراہم کرتے رہے ہیں۔ محمد ہارون عباس القمر آن لائن کے انتظامی اور تکنیکی امور کے نگران ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں انٹرنیٹ پر پاکستان کی تمام نیوز سائٹس کے پلیٹ فارم پاکستان سائبر نیوز ایسوسی ایشن کے پہلے صدر ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے