Home / اہم ترین / پرانا گولیمار پولیس کی فائرنگ سے ارشد پپو گروہ کا کارندہ ہلاک

پرانا گولیمار پولیس کی فائرنگ سے ارشد پپو گروہ کا کارندہ ہلاک

جدگال چوک پر تعینات اہلکار ہوٹل سے کھانا لے کر واپس آرہے تھے کہ مسلح ملزمان نے فائرنگ کردی،3ملزمان فرار
سی ٹی ڈی کی ٹیم نے کالعدم تنظیموں کے 4 دہشت گرد گرفتار کرلیے،ملزمان فنڈز افغانستان بھجوانے میں ملوث
کراچی (کرائم رپورٹر) کاؤنٹر ٹیررازم ڈپارٹمنٹ نے کالعدم تنظیموں کے 4 دہشت گردوں کو گرفتار کرلیا جبکہ پولیس مقابلے میں ارشد پپو گروہ کا کارندہ مارا گیا۔ تفصیلات کے مطابق سی ٹی ڈی انوسٹی گیشن کی ٹیم نے سائٹ سیمینز چورنگی کے قریب 2 دہشت گردوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا۔ ایس ایس پی جنید شیخ کے مطابق ملزمان کاشان عرف کفایت اللہ اور محمد ارشاد عرف ذکریا کا تعلق کالعدم ٹی ٹی پی سے ہے جو فنڈز جمع کرکے افغانستان بھجوانے میں ملوث رہے ہیں۔ ملزمان سے 2 چندہ بکس اور چند رسیدیں برآمد ہوئیں۔ سی ٹی ڈی نے یونیورسٹی روڈ کے قریب سے محمد کامران عرف حذیفہ اور عبدالرؤف عرف ابورضوان کو گرفتار کرکے چنے کی رسیدیں برآمد کرلیں۔ ملزمان کا تعلق لشکر جھنگوی سے ہے۔ چاروں ملزمان افغانستان سے ٹریننگ حاصل کرچکے ہیں، ملزمان کے خلاف تھانہ سی ٹی ڈی میں مقدمات درج کردیے گئے۔ پاک کالونی تھانے کی حدود پرانا گولیمار جدگال چوک باڑے والی پولیس پکٹ کے پاس کھڑی بکتر بند میں تعینات 4 اہلکاروں میں سے 2 اہلکار ہوٹل سے کھانا لے کر واپس جارہے تھے کہ گینگ وار کے کارندوں نے ان پر فائرنگ کردی، ایس ایچ او عزیز شیخ کے مطابق جوابی فائرنگ میں ایک ملزم ہلاک اور اس کے 3 ساتھی فرار ہوگئے۔ جائے وقوعہ سے پولیس نے نائن ایم ایم پستول اور 4 خالی خول تحویل میں لے لیے ہیں، ہلاک ملزم کی شناخت 35 سالہ راشد بلوچ کے نام سے ہوئی جو ارشد پپو کا کارندہ بتایا جاتا ہے۔

About محمد ہارون عباس قمر

محمد ہارون عباس، صحافی، براڈکاسٹراورسافٹ وئر انجینئرپاکستان کے مانچسٹر فیصل آباد میں پیدا ہوئے۔ابتدائی تعلیم فیصل آباداوربراڈکاسٹنگ کی تعلیم ہلورسم اکیڈمی ، ہالینڈسے حاصل کی۔ کمپیوٹر میں تعلیم اسلام آباد، پاکستان سے حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ، ریڈیائی صحافت سے وابستہ رہے ہیں۔اس حوالے سے پاکستان کے مختلف ٹی وی چینلزکے ساتھ ساتھ ریڈیو ایران،ریڈیو پاکستان سے ان کی وابستگی رہی۔ تعلیم اور صحافتی سرگرمیوں کے سلسلے میں وہ پاکستان کے مختلف شہروں کے علاوہ ایران، سری لنکا، نیپال، وسطی ایشیائی ریاستوں‌کے علاوہ مشرقی یوروپ کے مختلف ممالک کا سفر کر چکے ہیں۔مختلف اخبارات میں سماجی، سیاسی اور تکنیکی امور پر ان کے مضامین شائع ہوتے رہتے ہیں۔علاوہ ازیں اردو زبان کو کمپیوٹزاڈ شکل میں ڈھالنے میں ان کا بہت بڑا کردار ہے۔ محمد ہارون عباس ممتاز این جی اوز سے وابستہ رہے ہیں۔ جن میں جنوبی ایشیائی ممالک کی تنظیم ساوتھ ایشین سنٹر اور پاکستان کی غیر سرکاری تنظیموں کے نمائندہ فورم پاکستان این جی اوز فیڈرشین شامل ہیں۔ علاوہ ازیں پاکستان مسلم لیگ کے مرکزی میڈیا ونگ اسلام آباداور پاکستان کے پارلیمنٹرینز کی تنظیم پارلیمنٹرین کمشن فار ہیومین رائٹس میں بھی تکنیکی امور کے نگران رہے ۔وہ پاکستان کے سب سے بڑے نیوز گروپ جنگ گروپ آف نیوزپیپرز، پاکستان کے اردو زبان کے فروغ کے لئے قائم کئے گئے ادارے مقتدرہ قومی زبان ، پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی گروپ دیوان گروپ آف کمپنیز کو تکنیکی خدمات فراہم کرتے رہے ہیں۔ محمد ہارون عباس القمر آن لائن کے انتظامی اور تکنیکی امور کے نگران ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں انٹرنیٹ پر پاکستان کی تمام نیوز سائٹس کے پلیٹ فارم پاکستان سائبر نیوز ایسوسی ایشن کے پہلے صدر ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے