کشمیر کی جنگ، پوسٹرز کے ساتھ

نئی دہلی:22 ستمبر (ساؤتھ ایشین وائر)یو ٹی دہلی کے ایک ریٹائرڈ پروفیسر وپن کمار ترپاٹھی کشمیر کی جنگ پوسٹرز اور پمفلٹس کے ساتھ لڑ رہے ہیں۔71 سالہ پروفیسرنے ہندی اور انگریزی پوسٹرزکے ساتھ جنوبی دہلی کے سرووڈیا انکلیو راہگیروں میں پوسٹرز تقسیم کرنے کے لئے طویل سفر طے کیا۔
ساؤتھ ایشین وائر کے مطابق پروفیسر ترپاٹھی کا کہنا ہے کہ وہ "Disquiet of Kashmiri Masses and Jubilation in Rest of India Test Our Soul” کے عنوان سے پمفلٹ تقسیم کررہے تھے، مولچند فلائی اوور کے قریب ، ایک کار ان کے پاس رکی اور ڈرائیور نے پمفلٹ طلب کیا۔ اس سے پہلے کہ ترپاٹھی جواب دیتے ، اس شخص نے اس کے ہاتھ سے 150 پوسٹرز کا پیکٹ چھین لیا۔
"وہ مجھ پر چیخا ، کیا تم پاکستانی ہو؟ تم غداری کررہے ہو! اگر تم بوڑھے نہ ہوتے تو میں تمہیں مار دیتا’۔ میں نے جواب دیا ، ‘اگر تم چاہو تو ابھی کر سکتے ہو ، لیکن مجھے بتا ؤکہ میرے پوسٹرز میں غلط کیا ہے؟ ترپاٹھی نے اپنے ساتھ بیتے ایک واقعے کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا۔
جب کچھ پولیس والے پہنچے تو اس شخص نے ان سے مجھے گرفتار کرنے کو کہا۔
انہوں نے بتایا۔ "میں نے کہا کہ میں کشمیری عوام اور بقیہ ہندوستان کے درمیان افہام و تفہیم چاہتا ہوں۔ ایک ریاست کے لوگ بے چین ہیں ، اور دوسری ریاستوں میں رہنے والے خوشی منا رہے ہیں۔ میرے پوسٹرز قومی اتحاد کو فروغ دیتے ہیں۔”
ترپاٹھی 27 سالوں سے پوسٹرز لکھ کر بانٹ رہے ہیںاور ان کی تقسیم کے لئے آسام ، مدھیہ پردیش ، چھتیس گڑھ ، راجستھان اور ہریانہ تک کا سفر کرتے رہے ہیں اور اکثر انھیں بدسلوکی کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ لیکن یہ پہلا موقع تھا جب اس نے اس سے پوسٹرز چھین لیے تھے اور انہیں تشدد کا خطرہ تھا۔
فزکس کے سابق پروفیسر نے "بابری مسجد کی شناخت کو مسمار کرنے کے اگلے دن” پوسٹر سے اپنے اس عشق کا آغازکیا تھا۔ انہوں نے جواہر لال نہرو یونیورسٹی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ سے تعلق رکھنے والے آئی سی ٹی پروفیسرز اور طلبہ کی مدد سے "ملک میں تشدد کی آگ” کے عنوان سے 20000پوسٹرزتقسیم کیے۔
ان کا تازہ ترین پوسٹر مرکز سے جموں و کشمیر سے متعلق 5 اگست کے فیصلوں کو منجمد کرنے کا مطالبہ کرتا ہے۔ ان کا کہنا ہے "جس طرح میں قومی اتحاد کو سمجھتا ہوں وہ یہ ہے کہ اگر ہندوستان کا ایک حصہ تکلیف میں ہے تو باقی ہندوستان اسے تسلیم کرتا ہے۔”کشمیر میں حکومت کے اقدامات کے اثرات کشمیری عوام کو پہنچنے والی چوٹ سے کہیں زیادہ باقی ہندوستان میں بدتر ہوئے ہیں۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں