دورہ آسٹریلیا کے لیے پاکستانی ٹیم کا اعلان: کپتانی کے بعد سرفراز احمد کھلاڑی کی حیثیت سے بھی ٹیم سے باہر

چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ مصباح الحق نے دورہ آسٹریلیا کے لیے ٹیسٹ اور ٹی ٹوئنٹی ٹیم کے لیے نئے کھلاڑیوں کا انتخاب کیا ہے اور پہلی مرتبہ محمد موسیٰ، عثمان قادر، خوشدل شاہ، کاشف بھٹی اور نسیم شاہ کو ٹیم کا حصہ بنایا گیا ہے۔

پیر کے روز مصباح الحق نے آسٹریلیا میں کھیلے جانے والی ٹی ٹوئنٹی سیریز اور ورلڈ ٹیسٹ کرکٹ چیمپیئن شپ کے دو ٹیسٹ میچوں کے لیے ٹیموں کا اعلان کیا۔

اس حوالے سے حیران کن انتخاب مرحوم لیجنڈ لیگ سپنر عبدالقادر کے صاحبزادے عثمان قادر کا ہے جنھیں مصباح الحق کے مطابق ’آسٹریلیا میں کھیلنے کے تجربے‘ کے باعث ٹی ٹوئنٹی ٹیم میں شامل کیا گیا ہے۔

رواں برس 26 سالہ عثمان قادر قومی ٹیم میں شمولیت نہ ہو سکنے کے باعث آسٹریلیا منتقل ہونے کے بارے میں سنجیدگی سے سوچ رہے تھے۔

لوئر دیر سے تعلق رکھنے والے نسیم شاہ کی عمر محض 16 برس ہے جبکہ رواں برس اسلام آباد یونائیٹڈ کے لیے پاکستان سپر لیگ میں کھیلنے والے فاسٹ بولر محمد موسیٰ کی عمر 19 برس ہے۔ دونوں فاسٹ بولرز کو ان کی تیز رفتار کے باعث بطور سرپرائز پیکج ٹیم کا حصہ بنایا گیا ہے۔

وکٹ کیپر و بیٹسمین سرفراز احمد کپتانی سے ہٹائے جانے کے بعد عام کھلاڑی کی حیثیت سے بھی پاکستان کی ٹیسٹ اور ٹی ٹوئنٹی ٹیم میں جگہ برقرار رکھنے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں۔

یاد رہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے جمعے کے روز سرفراز احمد کو ٹیسٹ اور ٹی ٹوئنٹی ٹیموں کی قیادت سے ہٹانے کا اعلان کیا تھا۔ سرفراز احمد کو انٹرنیشنل کرکٹ سے باہر کرنے کے بارے میں پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین احسان مانی نے یہ موقف اختیار کیا تھا کہ پچھلے کچھ عرصے سے ان کی کارکردگی اور اعتماد دونوں متاثر ہوئے تھے۔

سرفراز احمد نے 2010 میں اپنے ٹیسٹ کریئر کا آغاز کیا تھا لیکن 2014 میں ان کی ٹیسٹ کرکٹ میں واپسی ہوئی اور وہ اپنی بیٹنگ اور وکٹ کیپنگ میں عمدہ کارکردگی کے سبب کپتان مصباح الحق کے لیے ایک قابل اعتماد ساتھی بن گئے۔

رضوان سرفراز

محمد رضوان مصباح الحق کی قیادت میں سوئی نادرن گیس کی ٹیم کی طرف سے کھیلتے رہے ہیں اور ڈومیسٹک کرکٹ میں ان کی کارکردگی اچھی رہی ہے

مصباح الحق کی ریٹائرمنٹ کے بعد وہ ٹیسٹ ٹیم کے کپتان مقرر ہوئے۔ اظہر علی کی قیادت سے مایوس ہونے کے بعد 2017 میں پاکستان کرکٹ بورڈ نے سرفرازاحمد کو ون ڈے کی کپتان بھی سونپ دی۔ 2016 میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے بعد انھیں شاہد آفریدی کی جگہ ٹی ٹوئنٹی ٹیم کا کپتان بھی مقرر کر دیا گیا تھا۔

سرفراز احمد کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے 2017 میں چیمپیئنز ٹرافی جیتی اور آئی سی سی کی ٹی ٹوئنٹی عالمی رینکنگ میں پہلی پوزیشن حاصل کی، لیکن ٹیسٹ کرکٹ میں ان کی قیادت میں پاکستانی ٹیم کو سری لنکا، نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقہ کے خلاف سیریز میں شکست سے دوچار ہونا پڑا اور وہ صرف آسٹریلیا کے خلاف سیریز جیتنے میں کامیاب ہوسکے۔

رضوان کے کریئر پر ایک نظر

27سالہ محمد رضوان کا تعلق خیبر پختونخوا سے ہے۔ وہ اب تک ایک ٹیسٹ، 32 ون ڈے اور 13 ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کرچکے ہیں تاہم سرفراز احمد کی موجودگی میں انھیں زیادہ مواقع نہیں مل سکے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ نے اسی سال آسٹریلیا کے خلاف ون ڈے سیریز میں سرفراز احمد سمیت چند کرکٹرز کو آرام کروایا تو محمد رضوان نے ملنے والے موقع سے بھرپور فائدہ اٹھاتے ہوئے شارجہ اور دبئی کے ون ڈے انٹرنیشنل میچوں میں سنچریاں بنا ڈالیں۔

محمد رضوان مصباح الحق کی قیادت میں سوئی ناردرن گیس کی ٹیم کی طرف سے کھیلتے رہے ہیں اور ڈومیسٹک کرکٹ میں ان کی کارکردگی اچھی رہی ہے۔

محمد رضوان اس سیزن میں جاری قائدِ اعظم ٹرافی میں دو سنچریاں بنا چکے ہیں جبکہ فیصل آباد میں ہونے والے ٹی ٹوئنٹی کپ میں 31 ناٹ آؤٹ، 45، 70 اور 52 کی عمدہ اننگز کھیلنے میں کامیاب رہے ہیں۔

عمران خان سینیئر کی واپسی

دائیں ہاتھ سے تیز بولنگ کرنے والےعمران خان نے نو ٹیسٹ میچوں میں 28 وکٹیں حاصل کررکھی ہیں لیکن انھوں نے آخری ٹیسٹ جنوری2017 میں آسٹریلیا کے خلاف سڈنی میں کھیلا تھا۔

محمد موسیٰ

19 سالہ محمد موسٰی کا تعلق کوہستان سے ہے تاہم انہوں نے اپنی کلب کرکٹ راولپنڈی میں کھیلی ہے۔

محمد موسٰی، خوشدل شاہ اور نسیم شاہ کون ہیں؟

19 سالہ محمد موسٰی کا تعلق کوہستان سے ہے تاہم انھوں نے اپنا کلب کرکٹ راولپنڈی میں کھیلا ہے۔

انھوں نے گذشتہ سال نیوزی لینڈ میں منعقدہ انڈر19 ورلڈ کپ میں پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے پانچ میچوں میں سات وکٹیں حاصل کی تھیں جس میں انڈیا کےخلاف 67 رنز کے عوض چار وکٹوں کی عمدہ کارکردگی شامل تھی۔

محمد موسٰی نے گذشتہ سال ہی فرسٹ کلاس کرکٹ شروع کی تھی۔ اس سال پاکستان سپر لیگ میں اسلام آباد یونائیٹڈ کی طرف سے انپوں نے سات میچز کھیلے اور آٹھ وکٹیں حاصل کیں۔

نسیم شاہ انڈر 19 کے فاسٹ بولر ہیں جن کا تجربہ فرسٹ کلاس کرکٹ میں برائے نام ہے۔

کاشف بھٹی نواب شاہ سے تعلق رکھنے والے سلو لیفٹ آرم اسپنر ہیں جو فرسٹ کلاس کرکٹ میں 300 سے زائد وکٹیں حاصل کرچکے ہیں۔

خوشدل شاہ بنوں سے تعلق رکھنے والے بائیں ہاتھ کے مڈل آرڈر بیٹسمین ہیں۔

ٹیسٹ اور ٹی ٹوئنٹی سکواڈ

ٹی ٹوئنٹی ٹیم میں شامل کھلاڑیوں میں بابر اعظم (کپتان)، آصف علی، فخر زمان، حارث سہیل، افتخار احمد، عماد وسیم، امام الحق، خوشدل شاہ، محمد عامر، محمد حسنین، محمد عرفان، محمد رضوان، موسیٰ خان، شاداب خان، عثمان قادر اور وہاب ریاض شامل ہیں۔

دوسری جانب ٹیسٹ ٹیم میں شامل کھلاڑیوں میں اظہر علی (کپتان)، عابد علی، اسد شفیق، بابر اعظم، حارث سہیل، امام الحق، عمران خان، افتخار احمد، کاشف بھٹی، محمد عباس، محمد رضوان، موسیٰ خان، نسیم شاہ، شاہین شاہ آفریدی، شان مسعود اور یاسر شاہ شامل ہیں۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں