امریکہ شمالی کوریا مذاکرات کی سست روی پر جنوبی کوریا کی مایوسی

جنوبی کوریا کے صدر کے ایک سینئر ایڈوائزر نے شمالی کوریا سے متعلق امریکی پالیسی پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ واشنگٹن کو پیانگ یانگ سے نمٹنے کے لیے زیادہ ٹھوس اقدامات کرنے ہوں گے۔

وائس آف امریکہ کے ساتھ اپنے انٹرویو میں جیونگ سی ہیون نے کہا ہے کہ امریکہ کو چاہیئے کو شمالی کوریا کو اپنے جوہری ہتھیار ترک کرنے پر آمادہ کرنے کے لیے زیادہ پرکشش ترغیبات دے۔ سی ہیون جنوبی کوریا کے صدر مون جایے ان کے مشیر کے طور پر کام کرتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ آپ کو ایسا کام نہیں کرنا چاہیے کہ بظاہر تو آپ گاجر کی پیش کش کر رہے ہوتے ہیں لیکن اصل میں آپ کی جانب سے چھڑی کا استعمال ہو رہا ہوتا ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکہ کو چاہیے کہ شمالی کوریا کو اپنا جوہری پروگرام ترک کرنے پر آمادہ کرنے کے لیے ایسی ترغیبات دے جو اس کے لیے جوہری ہتھیاروں کے مقابلے میں زیادہ پرکشش ہوں۔

جیونگ کے تبصرے ایک ایسے موقع پر سامنے آئے ہیں جب امریکہ کے شمالی کوریا کے ساتھ جوہری مذاکرات کے لیے مزید مراعات کی اختتام سال ڈیڈ لائن ختم ہونے والی ہے۔

شمالی کوریا نے دھمکی دی ہے کہ وہ طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائل یا جوہری ہتھیاروں کے تجربات دوبارہ شروع کر سکتا ہے جو اسے باز رکھنے کے لیے دو سال سے جاری سفارت کاری کی ناکامی کے متراف ہو گا۔

اس کے نتیجے میں جزیرہ نما کوریا میں کشیدگیاں لوٹ سکتی ہیں جو جنوبی کوریا کے لیے صدر مون کے لیے سیاسی دھچکہ ہو گا جو شمالی کوریا کے ساتھ معاملات بہتر بنانا چاہتے ہیں۔

مذاکرات ٹوٹنے کے امکان کے پیش نظرشمالی کوریا اپنے جنوبی ہمسائے جنوبی کوریا پرنکتہ چینی کرتے ہوئے یہ کہہ چکا ہے کہ وہ بین الکوریائی منصوبوں سے انکار کر سکتا ہے۔

جیونگ کہتے ہیں کہ مسئلہ یہ نہیں ہے کہ شمالی کوریا جنوبی کوریا کے ثالث کے کردار کو مسترد کرتا ہے بلکہ بات یہ ہے کہ امریکہ کو چاہیے کہ وہ جنوبی کوریا کو بااختیار کرنے کی حوصلہ افزائی کرے۔ صرف اسی صورت میں امریکی صدر اپنے سیاسی مقاصد حاصل کر سکتے ہیں۔

جنوبی کوریا کے عہدے دار کئی مہینوں سے جوہری مذاکرات کی سست روی کی شکایت کر تے ہوئے کہہ رہے ہیں کہا امریکہ کی جانب سے پابندیاں نرم کرنے سے انکار نے انہیں دونوں کوریاؤں کے درمیان اس معاہدے پر پیش رفت سے روک رکھا ہے جس پر 2018 میں دستخط ہوئے تھے۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں