طاقتور ترین کیمرے والا بھارتی سیٹیلائٹ خلا میں روانہ

بھارت کے خلائی تحقیقاتی ادارے ‘انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن’ (اسرو) نے بدھ کی صبح ‘کارٹوسیٹ تھری’ نامی ایک سیٹیلائٹ خلا میں روانہ کیا ہے جس کے ساتھ 13 دیگر چھوٹے سیٹیلائٹس بھی فضا میں بھیجے گئے ہیں۔

سیٹیلائٹ بھارتی شہر، سری ہری کوٹہ میں واقع ستیش دھون اسپیس سینٹر سے بدھ کی صبح 9 بج کر 28 منٹ پر روانہ ہوا۔

اسرو کے مطابق کارٹوسیٹ تھری سے بڑے پیمانے پر شہری منصوبہ بندی، دیہی وسائل اور انفراسٹرکچر میں پیش رفت اور ساحلی زمین کے استعمال میں مزید مدد ملے گی۔

بھارت کے وزیرِ اعظم نریندر مودی نے سیٹیلائٹ کی کامیاب لانچنگ پر اپنے ٹوئٹ میں خلائی تحقیقاتی ادارے کو مبارک باد دی ہے۔

نریندر مودی نے کہا کہ وہ کارٹوسیٹ تھری اور امریکہ کی چھوٹی سیٹیلائٹ کی لانچنگ پر اسرو کو دلی مبارک باد پیش کرتے ہیں۔

خیال رہے کہ کارٹوسیٹ تھری کے ساتھ روانہ کیے جانے والے 13 چھوٹے سیٹیلائٹ امریکی ہیں جنہیں کمرشل مقاصد کے لیے فضا میں بھیجا گیا ہے۔

کارٹوسیٹ تھری کا کیمرہ نہایت طاقتور بتایا جا رہا ہے جس کی بدولت وہ خلا سے زمین پر ایک فٹ سے بھی کم یعنی 9 اعشاریہ 84 انچ اونچائی تک کی تصویر اتار سکے گا۔

کارٹوسیٹ تھری کا وزن 1625 کلو ہے جب کہ اس سے نہایت باریک شے کو بھی واضح طور پر دیکھا اور جانچا جا سکتا ہے۔

سیٹیلائٹ کی لانچنگ کے بعد اسرو کے چیف ڈاکٹر کیسیوان نے ایک بیان میں کہا کہ یہ بھارت کا اب تک کا بہترین ‘ارتھ آبزرویشن’ سیٹیلائٹ ہے۔ اگلے سال مارچ تک اس طرح کے 13 مزید سیٹیلائٹ خلا میں بھیجے جائیں گے۔

بھارتی خلائی ماہرین نے دعویٰ کیا ہے کہ ابھی تک اتنے طاقتور کیمرے والا کوئی بھی سیٹیلائٹ کسی ملک نے خلا میں روانہ نہیں کیا۔ امریکہ کی نجی اسپیس کمپنی ‘ڈیجیٹل گلوب’ کا ‘جیو آئی ون’ سیٹیلائٹ بھی 16 اعشاریہ 14 انچ کی اونچائی تک کی تصویر اتار سکتا ہے۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں