قاسم سلیمانی کی ہلاکت کیخلاف احتجاج کراچی میں احتجاجی ریلی، اہم شاہراہیں بند

پریس کلب سے امریکی قونصل خانے تک نکالی جانے والی ریلی میں بچے اور خواتین بھی شامل تھے، امریکہ مردہ باد کے نعرے
ریلی کے شرکاء امریکی قونصل خانے جانا چاہتے تھے، راستے کی رکاوٹیں بھی ہٹادیں، پولیس اور رینجرز نے آگے بڑھنے سے روک دیا
کراچی (اسٹاف رپورٹر) عراق میں امریکی حملے میں ایرانی جنرل قدس فورس کے کمانڈر قاسم سلیمانی کے قتل کے خلاف کراچی میں پریس کلب سے امریکی قونصل خانے تک احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ پولیس نے رکاوٹیں لگا کر اہم مقامات کے راستے بند کر دیے تھے جبکہ مظاہرین کو امریکی قونصلیٹ جانے سے بھی روک دیا تھا۔ امریکی فورسز نے چند روز قبل عراقی دارالحکومت بغداد کے ایئرپورٹ پر راکٹ حملے میں ایرانی جنرل اور قدس فورس کے کمانڈر جاں بحق ہوگئے تھے، اس جارحانہ اقدام کے بعد ایران اور امریکا کے تعلقات میں کشیدگی پیدا ہو گئی تھی جبکہ ایران اور عراق میں امریکا مخالف احتجاج کا سلسلہ شروع ہو گیا تھا۔ جنرل قاسم سلیمانی کے قتل کے خلاف کراچی میں مختلف مذہبی جماعتوں کی جانب سے ریلی کا انعقاد کیا گیا۔ ریلی سے قبل ہی پولیس اور رینجرز کی جانب سے سیکورٹی کے سخت ترین انتظامات کیے گئے تھے اور امریکی قونصلیٹ جانے والے راستوں کو رکاوٹیں لگا کر بند کیا گیا تھا۔ مظاہرین کی جانب سے پریس کلب پر جلسے کا انعقاد کیا گیا جس سے خطاب کرتے ہوئے علامہ شہنشاہ حسین کا کہنا تھا کہ ترجمان پاک فوج کا پاکستانی سرزمین کسی برادر ملک کے خلاف نہ استعمال کرنے کا بیان خوش آئند ہے۔ ریلی کے شرکاء فوارہ چوک سے آئی آئی چندریگر روڈ اور پھر ٹاور اور نیٹی جیٹی پُل سے ہوتے ہوئے ایم ٹی خان روڈ پہنچے جہاں امریکی قونصلیٹ واقع ہے۔ پولیس نے ریلی کو کنٹینر لگا کر امریکی قونصل خانے جانے سے روک دیا، ریلی کے شرکا نے مشتعل ہو کر رکاوٹیں ہٹانے کی کوشش کی، پولیس کی جانب سے واٹر کینن بھی طلب کی گئی تھی تاہم مظاہرین پرامن طور پر منتشر ہوگئے۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں