طیارہ حادثہ ،ایران متاثرہ لواحقین کو معاوضہ دینے کیلئے رضامند

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک) ایران نے پاسداران انقلاب ایران کی جانب سے حادثاتی طور پر یوکرین کا مسافر طیارہ تباہ کرنے کے دوران ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین کو زر تلافی دینے پر رضا مندی ظاہر کردی۔ ایران کے مقامی میڈیا کے مطابق مرکزی انشورنس کمپنی کے سربراہ غلام رضا سلیمانی نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ یوکرین کا جہاز انسانی غلطی کی وجہ سے ایران میں تباہ ہوا جس کی وجہ سے حکومت متاثرہ خاندانوں کومعاوضے کی ادائیگی کے سلسلے میں اچھا تعاون کرے گی۔انشورنس کمپنی کے سربراہ کا کہنا تھا کہ پاسداران انقلاب ایران کی جانب سے جہاز کو غلطی سے فائر کا نشانہ بنایا گیا‘ ایران اور
یوکرین اس نقصان پر بات چیت کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایرانی کمپنیاں بیرون ملک میں اپنے مسافروں کے تحفظ کے لیے انہیں انشورنس جاری کرچکی تھیں لیکن جہاز ایران میں تباہ ہوا، ایرانی جہازوں کو ایران انشورنس فراہم کرتا ہے لیکن اس جہاز کا تعلق یوکرین سے تھا تو اسے یوکرین کی انشورنس حاصل تھی تاہمتہران حکومت ہلاک ہونے والوں کو زر تلافی دینے کے لیے تیار ہے۔ جبکہ حکومت ایران نے مظاہرین پر فائرنگ کی وڈیوز کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ طیارے کی تباہی کے خلاف احتجاج کرنے والے مظاہرین پر فائرنگ نہیںکی۔ تہران پولیس کے سربراہ حسین رحیمی نے سرکاری نشریاتی ادارے کو انٹرویو میں کہا کہ مظاہرے میں پولیس نے کسی پر بھی فائرنگ نہیں بلکہ اس کے بجائے پولیس افسران کو تحمل کا مظاہرہ کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔ واضح رہے کہ جنرل قاسم سلیمانی کے قتل کے بعد ایران امریکا کشیدگی کے دوران 8 جنوری کو پاسداران انقلاب ایران کا ایک میزائل لگنے سے یوکرین کا مسافر بردار طیارہ ایران میں گر کر تباہ ہوا جس کے نتیجے میں طیارے میں سوار تمام 176 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں