بیلجیم، مغربی کنارے پر قبضے کے خلاف مظاہرہ

بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں اسرائیل کے زیر قبضہ فلسطین کے مغربی کنارے (غرب اردن) میں غیرقانونی یہودی بستیوں اور اردن وادی کے الحاق پلان کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔

احتجاجی مظاہرے میں دنیابھر کی امن پسند تنظیموں سمیت فلسطینی عوام نے ٹرون اسکوائر کے قریب امریکی سفارت خانے کے باہر اسرائیل مخالف نعرے لگائے گئے۔

مظاہرین نے ہاتھوں میں فلسطین کے پرچم اور “فلسطین زندہ باد”،  “اسرائیل فلسطین کو اپنی کالونی بنا رہا ہے فلسطین تکلیف میں ہے” جیسے نعرے درج تھے۔

دوسری جانب مظاہرین سے نمٹنے کیلئے پولیس نے سخت حفاظتی اقدامات کررکھے تھے ۔

مزید پڑھئیے: اسرائیل فلسطینی اراضی ہتھیانے سے باز رہے، سعودی عرب

واضح رہے کہ اسرائیلی حکومت نے یکم جولائی سے مغربی کنارے ، وادی اردن اور بحر مردار سمیت فلسطین کے کئی علاقوں کو اپنی خود مختاری میں لانے کا اعلان کیا ہے۔ عالمی برادری کی طرف سے اسرائیل کے توسیع پسندانہ اقدامات کی سخت مخالفت کی جا رہی ہے تاہم صہیونی ریاست فلسطینی اراضی غصب کرنے کی سازش پرقائم ہے۔

قبل ازیں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 28 جنوری کو اسرائیل کے صدر بنیامین نیتان یاہو کے ساتھ وائٹ ہاوس میں کی گئی پریس کانفرنس میں نام نہاد مشرق وسطیٰ امن پلان کا اعلان کیا تھا  جیسے فلسطینیوں نے ماننے سے واضح انکار کردیا تھا ۔

دوسری جانب غرب اردن (مغربی کنارے) کو  اسرائیل  میں شامل کرنے کی صہونی کوششوں پر حماس پہلے ہی خبردار کرچکی ہے کہ “اگراسرائیل نے مغربی کنارے پر قبضے کی کوشش کی تو ایسی انتفادہ ہوگی جو اسرائیل اور عالمی دنیا نے کبھی نہیں ہوگی “۔

یاد رہے کہ بیلجیم ، یورپی یونین سمیت مشرق وسطیٰ  اور اقوام متحدہ  پہلے ہی اسرائیل کو خبردار کرچکے ہیں کہ  ” مغربی کنارے پراسرائیلی قبضہ خطے کیلئےخطرناک  ثابت ہوسکتا ہے “۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں