سالِ نو کا تحفہ: بجلی کے بعد پیٹرول بھی مزید مہنگا

اسلام آباد: حکومت نے سالِ نو کے آغاز پر پیٹرولیم قیمتوں میں اضافہ کردیا ہے۔ گزشتہ دنوں بجلی کی قیمتوں میں اضافے کے بعد حکومت نے یکم جنوری سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اعلان کردیا۔

پیٹرول کی قیمت میں 2 روپے 31 پیسے فی لیٹر اضافے کی منظوری دی گئی ہے جس کے بعد پٹرول کی نئی قیمت 106 روپے ہو گی۔ اس کے علاوہ ڈیزل کی قیمت میں 1 روپے 80 پیسے تک اضافہ کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے جس کے بعد ڈیزل کی نئی قیمت 110 روپے 24 پیسے ہوگی۔ اسی طرح کیروسین کی قیمت میں 3 روپے 36 پیسے جب کہ لائٹ ڈیزل کی قیمت میں 3 روپے 95 پیسے کا اضافہ کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ یکم جنوری سے پیٹرولیم مصنوعات مہنگی ہونے کا امکان ظاہر کیا گیا تھا۔ ذرائع کے مطابق اس حوالے سے اوگرا نے سمری پیٹرولیم ڈویژن کو بھجوائی تھی۔ اوگرا کی جانب سے پیٹرولیم ڈویژن کو بھیجی گئی سمری میں پیٹرول 2 روپے 96 پیسے فی لیٹر اور ہائی اسپیڈ ڈیزل 3 روپے 12 پیسے فی لیٹر مہنگا کرنے کی تجویز دی گئی تھی۔

پیٹرولیم مصنوعات میں اضافے سے متعلق وزیر اعظم ہاؤس سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ عوام کا ریلیف مدنظر رکھتے ہوئے وزیرِ اعظم عمران خان نے اوگرا کی سفارشات کے برعکس پٹرولیم مصنوعات میں کم سے کم اضافے کی منظوری دی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اوگرا کی جانب سے پٹرول کی قیمت میں 10.68 روپے فی لیٹر جبکہ ڈیزل کی قیمت میں 8.37 روپے فی لیٹر اضافے کی سفارش کی گئی تھی ۔ عوام کو ممکنہ حد تک ریلیف فراہم کرنے کی حکومتی ترجیحات کو مد نظر رکھتے ہوئے پٹرول کی قیمت میں محض 2.31 روپے جبکہ ڈیزل کی قیمت میں 1.80 روپے فی لیٹر اضافہ منظور کیا گیا ہے۔

اسی طرح اوگرا کی جانب سے کیروسین (مٹی کاتیل) میں 10.92 روپے فی لیٹر جبکہ لائٹ ڈیزل میں 14.87 روپے اضافہ تجویز کیا گیا تھا۔ اس کے برعکس کیروسین کی قیمت میں 3.36 روپے جبکہ لائٹ ڈیزل کی قیمت میں محض 3.95 روپے اضافہ کیا گیا ہے۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں