موسمیاتی تبدیلی سے نقصانات: ٹھوس اقدامات کا وقت آ گیا ہے ، اقوام متحدہ

نیویارک: اقوام متحدہ کے سربراہ نے کہا ہے کہ موسمیاتی بحران، خاص طور پر ترقی پذیر ممالک میں ہونے والے نقصان کے ازالے کے معاملے پر بامعنی اقدامات کا وقت آ گیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق مصر میں آئندہ اقوام متحدہ کے موسمیاتی سربراہی اجلاس سی او پی 27 سے پہلے سکریٹری جنرل انتونیو گوتریس اور مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے ماحولیاتی اقدامات پر تبادلہ خیال کے لیے عالمی رہنماﺅں کی میٹنگ کی مشترکہ میزبانی کی۔

انتونیو گوتریس نے اجلاس کے بعد اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ میرے پیغامات سخت تھے۔انہوں نے کہا کہ آپ سب نے پاکستان (میں سیلاب) کی خوفناک تصاویر دیکھی ہوں گی۔ یہ گلوبل وارمنگ کے صرف 1.2 ڈگری پر ہو رہا ہے، اور ہم تین ڈگری سے زیادہ کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

انہوں نے حکومتوں پر زور دیا کہ وہ چار مسائل سے نمٹیں: 1.5 سی کو ممکن رکھنے کے لیے زیادہ عزائم، ترقی پذیر دنیا سے مالی وعدوں کو پورا کرنا، موسمیاتی تبدیلیوں کے مطابق اقدامات اور(موسمیاتی تبدیلیوں سے) نقصان کا مسئلہ۔ترقی پذیر ممالک کا موقف ہے کہ تاریخی آلودگی پھیلانے والوں کو اخلاقی طور پر نقصان کا ازالہ کرنا چاہیے تاہم اس خیال کو امیر ممالک نے موسمیاتی سربراہی اجلاس سی او پی 27 میں مسترد کردیا تھا۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

ٹیلی گرام کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

القمرآن لائن کے ٹیلی گرام گروپ میں شامل ہوں اور تازہ ترین اپ ڈیٹس موبائل پر حاصل کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں