ٹیلی گرام کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

القمرآن لائن کے ٹیلی گرام گروپ میں شامل ہوں اور تازہ ترین اپ ڈیٹس موبائل پر حاصل کریں

آئی ایم ایف کا فارم سیکٹر پر ٹیکس لگانے کا مطالبہ

اسلام آباد: بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے صوبوں سے مزید ٹیکس وصولی اور زرعی ٹیکس کے نفاذ کا مطالبہ کیا ہے ۔

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے زرعی آمدنی پر ٹیکس عائد کرنے پر زور دیا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں زرعی شعبہ اپنی آمدنی کے حصے پر کم ٹیکس ادا کر رہا ہے۔

مانیٹری فنڈ نے حکومت کو صوبائی ٹیکسوں کو بڑھانے کے لیے نیشنل ٹیکس کونسل کو استعمال کرنے کا مشورہ بھی دیا ہے۔ آئی ایم ایف نے نشاندہی کی ہے کہ “قومی محصولات میں صوبے کا ٹیکس حصہ ایک فیصد کی کم سے کم سطح پر رہا ہے۔”

آئی ایم ایف نے صوبوں میں جائیدادوں پر مکمل ٹیکس وصولی کے ساتھ ساتھ خدمات پر سیلز ٹیکس کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے اس سے قبل پاکستان سے دفتر ہولڈرز، سرکاری عہدیداروں، وزراء اور ارکان پارلیمنٹ کے اثاثوں کا مطالبہ کیا تھا۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف نے آئندہ بجٹ 2024 میں انسداد بدعنوانی کے سخت اقدامات کی تجویز دی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ مانیٹری فنڈ نے حکومت کو سرکاری عہدیداروں کے اثاثوں کا اعلان کرنے کے لیے ایک پورٹل قائم کرنے کی ہدایت کی، لیکن حکومت ایسا کرنے میں ناکام رہی ہے۔

ذرائع نے مزید کہا کہ پاکستان کے حکام آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے تحت ایک پورٹل بنانے اور اثاثوں کی تفصیلات ظاہر کرنے کے پابند ہیں۔

ذرائع نے انکشاف کیا کہ حکومت نے افسران کے اثاثے ظاہر کرنے کے لیے ایک پرفارما تیار کیا تھا، لیکن اسے پبلک نہیں کیا گیا۔

ذرائع نے بتایا کہ مزید برآں، بینکوں کو اب نئے اکاؤنٹس کھولتے وقت سرکاری افسران سے اثاثوں کی معلومات حاصل کرنے کی ضرورت ہوگی۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں