اسرائیل، ترکی میں اپنے تجارتی اتاشی دفتر کو دوبارہ سے کھول رہا ہے

اسرائیل کی وزیرِ اقتصادیات و صنعت ‘اورنا باربیبائی’ نے کہا ہے کہ اسرائیل، ترکی میں اپنے تجارتی اتاشی دفتر کو دوبارہ سے کھول رہا ہے۔

اسرائیل وزارت اقتصادیات و صنعت کے جاری کردہ تحریری بیان کے مطابق  باربیبائی نے کہا ہے اسرائیل وزارت اقتصادیات یکم اگست سے ترکی میں اپنے اتاشی دفتر کو دوبارہ سے کھول رہی ہے۔ یہ  دفتر، ترکی کے ساتھ  اقتصادی تعلقات  کو مضبوط بنانے سے متعلق،  اسرائیل  کے مصّمم ارادے کا عکاس ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ "ہمارا مقصد، دس سال سے زیادہ طویل عرصے کے بعد، دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ اقتصادی کانفرنس  کا انعقاد کرنا ہے۔

بیان میں اسرائیل کے محکمہ صنعت وخارجہ تجارت کے سربراہ اوہاڈ کوہن کے بیانات کو بھی جگہ دی گئی ہے۔ کوہن نے کہا ہے کہ اسرائیل کی خارجہ تجارت کے لئے ترکی ایک اہم اقتصادی طاقت ہے۔ اس وقت ترکی کو بڑی مقدار میں برآمدات کی جا رہی ہیں اور ان میں مزید اضافے کی صلاحیت موجود ہے۔ دونوں ملکوں کے درمیان آزاد تجارتی سمجھوتے موجود ہیں۔ برآمداتی صلاحیت اصل میں باہمی تعاون کی فطرت کا بنیادی جزو ہے اور دونوں ملکوں کے مفاد میں بھی ہے”۔

اسرائیل وزارت صنعت و تجارت نے مزید کہا ہے کہ استنبول میں اسرائیل تجارتی اتاشی دفتر کا کھُلنا اس وقت ترکی کی منڈی کے لئے برآمدات کرنے والی 154 اسرائیلی فرموں پر بھی اثر انداز ہو گا اور ان کی تجارتی کاروائیوں کو مضبوط بنانے میں مدد دے گا۔

بیان میں ترکی کے اسرائیل کے چوتھے اہم تجارتی ساجھے دار ہونے کی طرف بھی اشارہ کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ اسرائیل اور ترکی کے درمیان 1997 میں آزاد تجارتی سمجھوتہ طے پایا تھا۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

ٹیلی گرام کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

القمرآن لائن کے ٹیلی گرام گروپ میں شامل ہوں اور تازہ ترین اپ ڈیٹس موبائل پر حاصل کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں