پیگاسس اسکینڈل کی تحقیقات کیلئے کمیٹی کی تشکیل کے سپریم کورٹ کے فیصلے کا خیرمقدم

نئی دلی 28اکتوبر (کے ایم ایس )
کانگریس کے رہنماء راہل گاندھی نے بھارتی سپریم کورٹ کی طرف سے پیگاسس جاسوسی اسکینڈل کی تحقیقات کیلئے ایک سابق جج کی نگرانی میں ایک کمیٹی تشکیل دینے کا خیرمقدم کیا ہے ۔ کمیٹی کو تکنیکی امور کے ماہرین کی مدد بھی حاصل ہوگی ۔
کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق راہل گاندھی نے مودی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ عدالت عظمی نے اس معاملے پر حزب اختلاف کے موقف کی حمایت کی ہے اوراس معاملے کو پارلیمنٹ میں دوبارہ اٹھایا جائے گا۔انہوں نے الزام عائد کیا کہ پیگاسس کے ذریعے قومی اداروں پر حملہ کیا گیا ہے۔ الیکشن کمیشن، پارلیمنٹ، وزیر اعلی، اپوزیشن لیڈر، سیاستدانوں اور صحافیوں کی جاسوسی کی کوشش کی گئی۔انہوں نے کہا کہ حکومت کو واضح کرنا چاہیے کہ جاسوسی کیلئے اسرائیلی ساختہ پیگاسس سپائی وئیر کس کس کے خلاف استعمال کیا گیا۔ راہل گاندھی نے کہا کہ ایسے الزامات سامنے آئے ہیں کہ حکومت پیگاسس جاسوس سافٹ ویئر کے ذریعے اہم لوگوں کی جاسوسی کر رہی ہے۔ مودی حکومت کو بتانا چاہیے کہ کیااسرائیل سے پیگاسس سپائی وئیرخریدا گیا، کس نے آرڈر دیا اور اس کا استعمال کہاں کہاں اور کس کس کے خلاف ہوا؟
واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے سابق جج آ وی رویندرن کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی ہے جسے تین تکنیکی ماہرین کی بھی مدد حاصل ہے ۔

وٹس ایپ کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

ٹیلی گرام کے ذریعے خبریں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے کلک کریں

القمرآن لائن کے ٹیلی گرام گروپ میں شامل ہوں اور تازہ ترین اپ ڈیٹس موبائل پر حاصل کریں

تمام خبریں اپنے ای میل میں حاصل کرنے کے لیے اپنا ای میل لکھیے

اپنا تبصرہ بھیجیں